اردوئے معلیٰ

Search

بے قراری گلے لگاتے ہوئے

ہجرِ طیبہ میں بلبلاتے ہوئے

 

شہرِ طیبہ سے لوٹ آتے ہوئے

اشک آنکھوں میں جھلملاتے ہوئے

 

ایک رونق ہے میرے چہرے پر

نعت سرکار کی سناتے ہوئے

 

فکرِ طیبہ کا کیف کیا کہنا

شعر مدحت کے گنگناتے ہوئے

 

یہ ہمارا ہے خلد اس کی ہے

آپ فرمائیں مسکراتے ہوئے

 

بے سکونی سکون سے بدلی

دل کو نعلین پر لٹاتے ہوئے

 

تجھ کو زاہدؔ طلب کریں آقا

بگڑی تقدیر کو بناتے ہوئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ