اردوئے معلیٰ

بے وجہ تو نہیں ہے مری پُر بہار صبح

بے وجہ تو نہیں ہے مری پُر بہار صبح

اِک گُلستانِ نعت سے ہے مستعار صبح

 

آنے کو ہے نوید دیارِ حضور سے

پانے کو ہے قرار مری بے قرار صبح

 

پیہم رکھا ہے نعتِ نبی نے سپردِ خیر

تمکین بار شام ہے ، تسکین بار صبح

 

ہونے دے اور میری شبِ وصل کو دراز

آہستہ گام ! اے مرے بے اختیار صبح

 

اِک کاروانِ گُلبَدناں ، جس کے زیرِ پا

منزل تھی دشتِ شامِ بلا ، رہگزار صبح

 

والیل نے سنوار دی زلفِ نگارِ شب

تنویرِ والضحیٰ سے ہُوئی اُستوار صبح

 

اوجِ خیال پر ہے مرے وہ طلوعِ نعت

دل جُو ہوئی ہے جس سے مری ناگوار صبح

 

جب تک نہ بامِ شوق پہ ہو نعت کا ودور

پاتی نہیں ہے پاسِ زرِ اعتبار صبح

 

تُو جو نہ ہو تو کیسے کٹے شامِ شوقِ شعر

تُو جو نہ ہو تو کس کا کرے انتظار صبح

 

صبحِ وصال پر ہوں ہماری شبیں فدا

شب ہائے دید پر ہو ہماری نثار صبح

 

امکاں میں ہو تو خوابِ تمنا پہ وار دوں

مقصودؔ یہ مہکتی ہوئی مشکبار صبح

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ