اردوئے معلیٰ

Search

ترے جمال کی نکہت تری پھبن پہ نثار

میں تیری آل کی نسبت ترے چمن پہ نثار

 

ترے حسین کے صدقے ترے حسن پہ نثار

ترے وجود کے پھولوں کے بانکپن پہ نثار

 

وہ نسلِ پاک کا گلشن وہ نُور نُور سمن

تری اس آلِ مطہّر ترے چمن پہ نثار

 

تری ہی آل کی شاہا ہے روشنی ساری

جہانِ قلب و نظر ہے کرن کرن پہ نثار

 

وہ ظلم و جور کی ظلمت بس ایک ہی شب تھی

پھر اس کے بعد اجالے رہے محن پہ نثار

 

وہ جس کا فیض تھے خطبے یہ کربلا و دمشق

جلالِ خطبۂ زینب ترے سخن پہ نثار

 

لکھیں جو آل کی مدحت پڑھیں جو آپ کی نعت

قلم قلم کے میں قرباں دہن دہن پہ نثار

 

لہو رلاتی ہے زنجیر کی صدا آقا

اسیرِ کرب و بلا کی میں ہر تھکن پہ نثار

 

عجیب کرب ہے آقا یہ چشمِ نوری میں

کبھی ہے خار پہ گریاں کبھی چبھن پہ نثار

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ