اردوئے معلیٰ

Search

تشبیب تھے ، تمہید تھے ماقبل کے اخیار

اے مطلعِ دیوانِ ازل ، قافیہ انوار !

 

بے ربط ہُوا جاتا ہے سانسوں کا تسلسل

لازم ہے کہ ڈھے جائے ترے ہجر کی دیوار

 

بے وجہ نہیں پُرسش و رسوائی سے بے غم

ہیں برسرِ محشر ، مرے سرکار طرفدار

 

بکھرے نہ کبھی حرف کی حُرمت کا حوالہ

ٹوٹے نہ کبھی نعت سے نسبت کا یہ پندار

 

لب بستہ ترے سامنے ہے طائرِ منطق

دَم رفتہ ترے آگے ہے تدبیر کا رہوار

 

تجسیم ہُوئی پہلے کوئی ساعتِ رویت

پھر مجھ کو ودیعت ہُوا یہ دیدۂ بیدار

 

لاریب ہیں ہر خاکی و نوری سے فزوں تر

اے صاحبِ معراجِ حقیقت ! ترے اَسرار

 

لے آیا تو ہُوں بارِ معاصی سرِ محشر

بخشش کو ہے اب تیری شفاعت مجھے درکار

 

’’ لو لاک لما ‘‘ غایتِ تخلیقِ دو عالَم

ہر ایک کے ہونے کا سبب آپ ہیں سرکار !

 

اے مقطعِ دیوانِ ابد ، نظمِ مکمل !

مقصودؔ بھی ہے تیری قِرَاءَت کا طلب گار

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ