تلاش

بندۂ حق نگر و مردِ مسلماں کی تلاش

پھر زمانہ کو ہوئی جراتِ ایماں کی تلاش

 

صبحِ خاموش کو ہے مہرِ درخشاں کی تلاش

شامِ تاریک کو ہے شمعِ فروزاں کی تلاش

 

ہے عزائم کو بلا خیزی طوفاں کی تلاش

ہے مقدر کو ابھی گردشِ دوراں کی تلاش

 

سینہ و دل کو ابھی گرمی ایماں کی تلاش

ہے نگاہوں کو ابھی منزلِ عرفاں کی تلاش

 

اہلِ ایماں کو ہے اس رفعتِ ایماں کی تلاش

لغزشِ پا کو ہو خود حلقۂ زنداں کی تلاش

 

ایک وہ دور کہ انساں تھے فرشتہ خصلت

ایک یہ وقت کہ انساں کو ہے انساں کی تلاش

 

الاماں پستی اخلاقِ زمانہ ہمدم

بے حیائی کو ہوئی دیدۂ حیراں کی تلاش

 

میگسارانِ حقیقت ہیں ابھی بادہ بجام

ہے انہیں فصلِ گل و ابرِ بہاراں کی تلاش

 

موسمِ لالۂ و گل آئے مقدر چمکے

ہو جنوں کو مرے پھر جیب و گریباں کی تلاش

 

شمع بردارِ شریعت کو سنا دو مژدہ

نظمِ عالم کو ہے اک شمع فروزاں کی تلاش

 

یا الٰہی وہ نظامِ ازلی کر برپا

جس میں حاکم کو ہو خود بے سر و ساماں کی تلاش

 

مجھ کو آیا ہے نظرؔ خواب میں تعبیر کرو

ہے زلیخا کو بہت یوسفِ کنعاں کی تلاش

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

لندن
خیال
رخصتی
مجھے اپنا نہیں
تکمیلِ ثنا کر دے یہ انساں میں نہیں دم
آمنہ بی کا پسر، راج کنور، لختِ جگر
ضیائے کون و مکان لا الٰہ الا اللہ
نعتِ پیغمبرؐ لکھوں طاقت کہاں رکھتا ہوں میں
سرتاجِ انبیاء ہو شفاعت مدار ہو
خاطی کہاں یہ اور کہاں نعتِ آنجنابؐ