اردوئے معلیٰ

Search

تمام رنگ وہی ہیں ترے بگڑ کر بھی

اے میرے شہر تُو اجڑا نہیں اجڑ کر بھی

 

ہیں آندھیاں ہی مقدر تو پھر دعا مانگو

شجر زمین پر اپنی رہیں اُکھڑ کر بھی

 

ہم ایسی خاک ہیں اس شہر زرگری میں جسے

بدل نہ پائے گا پارس کوئی رگڑ کر بھی

 

ملا ہے اب تو مسلسل ہی روئے جاتا ہے

وہ ایک شخص جو ہنستا رہا بچھڑ کر بھی

 

عجب مقام ہے یہ، وقت میں نہیں برکت

پہاڑ جیسا لگے دن مجھے سکڑ کر بھی

 

دیا گیا یہ تاثر کہ ہم بھی ہیں آزاد

ہمیں اُڑایا گیا جال میں جکڑ کر بھی

 

یہ کون لوگ ترے ساتھ چل رہے ہیں ظہیرؔ

اکیلے لگتے ہو ہر ہاتھ کو پکڑ کر بھی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ