شہر بانو کے لیے ایک نظم

تمہیں جب دیکھتا ھوں
تو مری آنکھوں پہ رنگوں کی پُھواریں پڑنے لگتی ھیں
تمہیں سُنتا ھوں
تو مُجھ کو قدیمی مندروں سے گھنٹیوں اور مسجدوں سے وِرد کی آواز آتی ھے
تمہارا نام لیتا ھوں
تو صدیوں قبل کے لاکھوں صحیفوں کے مُقدّس لفظ میرا ساتھ دیتے ھیں
تمہیں چُھو لُوں
تو دُنیا بھر کے ریشم کا مُلائم پن مری پَوروں کو آکر گُدگُداتا ھے
تمہیں گر چُوم لُوں
تو میرے ھونٹوں پر الُوھی، آسمانی، ناچشیدہ ذائقے یُوں پھیل جاتے ھیں
کہ اُس کے بعد مُجھ کو شہد بھی پھیکا سا لگتا ھے
تمہیں جب یاد کرتا ھوں
تو ھر ھر یاد کے صدقے مَیں اشکوں کے پرندے چُوم کر آزاد کرتا ھوں
تمہیں ھنستی ھوئی سُن لوں
تو ساتوں سُر سماعت میں سما کر رقص کرتے ھیں
کبھی تُم روٹھتی ھو
تو مری سانسیں اٹکنے اور دھڑکن تھمنے لگتی ھے

تمہارے اور اپنے عشق کی ھر کیفیت سے آشنا ھوں مَیں
مگر جاناں
تمہیں بالکل بُھلا دینے کی جانے کیفیت کیا ھے
مجھے محسوس ھوتا ھے
کہ مرگِ ذات کے احساس سے بھر جاؤں گا فوراً
تمہیں مَیں بُھولنا چاھوں گا تو مر جاؤں گا فوراً

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

نِیلگوں پانی کے ھر گھونٹ سے انکار کِیا
پہنچ سے دُور ، چمکتا سراب ، یعنی تُو
سجا کے چہرے پہ بیگانگی نہیں ملنا
تُجھ سے دور آتے ہوئے جانا کہ یہ سب کیا ہے
پسماندگانِ عشق کی ڈھارس بندھائی جائے
اُداسی صحن کے کونے میں سمٹی سمٹائی
سوچتا ہوں صیدِ مرگ ِ ناگہاں ہو جاؤں گا
مجھے تمغۂ حُسنِ دیوانگی دو
انتخاب 1988ء
عشق