اردوئے معلیٰ

تُم مری آگ ہو
جس کو پل پل میں رکھتا ہوں روشن
محبت کی مشعل سے
اور اپنی سانسوں کے ایندھن سے
اور اس کے شعلوں سے کلیاں بناتا ہوں
سرخ اور سبز اور جادو بھری
جن کی چنگاریوں سے جُڑی ہیں مری دھڑکنیں
جانِ جاں! تم مری آگ ہو

تُم مری جھیل ہو
جس کے نیلے کناروں کی حد سے پرے
روز اُڑ کے پہنچتا ہوں
گُم سُم پرندوں کے مانند
اور گھنٹوں پاؤں ڈبوئے تمہارے ہرے پانیوں میں
میں شاداب رہتا ہوں
سیراب رہتا ہوں
اے جانِ جاں! تُم مری جھیل ہو

تُم مری خاک ہو
جس سے گُوندھا گیا
میرے تن من کو
اور پھر بنائے گئے میرے سب خال و خد
میرا ہونا تمہاری عطا ہے
اگر تُم نہ ہوتی
تو بے شکل ہوتا میں، بے نام ہوتا
!مری جانِ جاں
تُم مری خاک ہو

تُم مہکتی لہکتی ہوا ہو مری
جس کی اُنگلی پکڑ کر میں بے نام باغوں میں پھرتا ہوں
اور لوٹتا ہی نہیں
جس کی خوشبو سے پُر ہیں مری سانس کے سب دیے
میرا ہر سانس تحفہ تمہارے لیے
کُفر کی تُہمتوں کو ذرا بھول کر
کیوں نہ کہہ دوں کہ ہاں تُم خُدا ہو مری
تُم مہکتی لہکتی ہوا ہو مری

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات