تھم گیا عالمِ دنیا کا چلن پل بھر میں

تھم گیا عالمِ دنیا کا چلن پل بھر میں

عازمِ عرش ہوئے شاہِ زمن پل بھر میں

 

جلوۂ شاہ میسر ہو لحد میں جس دم

آنکھ بن جائے مرا سارا بدن پل بھر میں

 

وہ بھی اوصاف محمد کے بیاں کرتا ہے

جس نے تخلیق کئے کوہ و دمن پل بھر میں

 

جیسے ہی نعت مری نوکِ زباں پر آئی

ہو گئی رحمتِ حق سایہ فگن پل بھر میں

 

صحنِ گلشن میں گئی بادِ ربیعِ اول

بڑھ گئی نرگس و لالہ کی پھبن پل بھر میں

 

خارِ صحرائے عرب میں تھی لطافت ایسی

ہو گئے اس پہ فدا سارے چمن پل بھر میں

 

تذکرہ کوئے منور کا کیا زائر نے

جاگ اٹھی دل میں حضوری کی لگن پل بھر میں

 

نطق نے جب بھی کیا اسمِ محمد کا طواف

مشکبو ہو گیا اشفاق دہن پل بھر میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

آپ کا ہے کرم اے رسولِ خدا
مقدر جب بلندی پر بفیضِ کبریا ہو گا
مجھے کامل یقین ہے، التجاؤں میں اثر ہو گا
بے نوا ہوں مگر ملال نہیں
عشق کا ہے یہ ہنر،میں ہوں یہاں نعت خواں
سرکار کی مدحت کو ہونٹوں پہ سجانا ہے
’’اے خاور حجاز کے رخشندہ آفتاب‘‘
جبینِ خامہ حضورِ اکرم کے سنگِ در پر جھکائے راکھوں
کسے نہیں تھی احتیاج حشر میں شفیع کی
میم تیرے نام کی تلخیصِ ہست و بود ہے

اشتہارات