تیرا نقشِ قدم شہِ نوّاب

تیرا نقشِ قدم شہِ نوّاب

ہے جہانِ کرم شہِ نوّاب

 

تیرے کوچے کا خطہ خطہ ہے

رشکِ باغِ ارم شہِ نوّاب

 

سر بہ خم تیرے آستانے پر

سارے جاہ و حشم شہِ نوّاب

 

یاد کر کے تجھے خود اپنی ذات

بھول جاتے ہیں ہم شہِ نوّاب

 

تم اگر سامنے رہو میرے

کیا وجود و عدم شہِ نوّاب

 

ابرِ باراں ہے دشتِ وحشت میں

تیری چشمِ کرم شہِ نوّاب

 

خم مقدر کا دور کرتا ہے

تیری زلفوں کا خم شہِ نوّاب

 

تیرے در پر نثار کرتا ہوں

دولتِ چشمِ نم شہِ نوّاب

 

تاجدارِ ولایتِ عظمیٰ

ہیں خدا کی قسم شہِ نوّاب

 

سارے عالم میں خانداں تیرا

سب سے ہے محترم شہِ نوّاب

 

تیری آنکھوں کے طاق میں روشن

ہے چراغِ حرم شہِ نوّاب

 

جو گزرتی ہے خوب جانتے ہو

کیا کہوں حالِ غم شہِ نوّاب

 

ہر گھڑی ، ہر نفس مجیبؔ کرے

تیری مدحت رقم شہِ نوّاب

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ