اردوئے معلیٰ

تیرا کوئی ثانی نہیں یا رحمۃ للعالمیں

مہر سپہر ہفتمیں یا رحمۃ للعالمیں

 

اے معدن فکر و نظر، اے مخزن فضل و ہنر

اے علم کے حصن حصیں یا رحمۃ للعالمیں

 

تو سربراہ عارفاں، سرآمد دانشوراں

تو ہے امام المتقیں یا رحمۃ للعالمیں

 

تو سید والا گہر، خاکی ہیں تیرے ہمسفر

نوری ہیں تیرے ہم نشیں یا رحمۃ للعالمیں

 

افضل ترا دستور ہے، اکمل ترا منشور ہے

اے رہبر دنیا و دیں یا رحمۃ للعالمیں

 

تو ہی مرا ایمان ہے، تجھ سے مری پہچان ہے

گر تو نہیں تو کچھ نہیں یا رحمۃ للعالمیں

 

صد انبساط انگیز ہے، پر نور و عنبر بیز ہے

تیرے وطن کی سرزمیں یا رحمۃ للعالمیں

 

تو ہی دلوں کا نور ہے، مثل چراغ طور ہے

تیرا کلام دلنشیں یا رحمۃ للعالمیں

 

اے مونس افسردگاں، چارہ گر آزردگاں

اے دولت اندوہگیں یا رحمۃ للعالمیں

 

یا رحمت رب الفلق، یا باعث اکرام حق

پر نور و فرخندہ جبیں یا رحمۃ للعالمیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات