اردوئے معلیٰ

تیرا کہنا مان لیں گے اے دلِ دیوانہ ہم​

تیرا کہنا مان لیں گے اے دلِ دیوانہ ہم​

چوم لیں روضہء سرکار بے تابانہ ہم ​

 

ایک دن ہوجائیں گے شمعِ رسالت پر نثار​

اِس لگن میں جی رہے ہیں صورتِ پروانہ ہم​

 

یہ حقیقت ہے ابھی اس آستاں سے دور ہیں​

اس حقیقیت کو بنادیں گے ابھی افسانہ ہم​

 

ساقیء کوثر کا جاں پرور اشارا چاہئے​

پھر چھلکنے ہی نہ دیں گے عمر کا پیمانہ ہم​

 

جس کے اک جھونکے سے کھِل اٹھتا ہے گلزارِ حیات

چاہتے ہیں وہ ہوائے کوچہء جانانہ ہم​

 

ان کے در پر مر کے ملتی ہے حیاتِ جاوداں​

موت کے ہاتھوں سے لیں گے زیست کا پروانہ ہم​

​ 

آپ کا غم حاصلِ عمرِ گریزاں ہے ایاز

ان کے در پر پیش کردیں گے یہی نذرانہ ہم​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ