تیرے میرے مزاج پر طاری

تیرے میرے مزاج پر طاری

اپنے اپنے مزاج کا موسم

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سکوت ِشام میں چیخیں سنائی دیتی ہیں
سر سے لے کر پاؤں تک ساری کہانی یاد ہے
درد بھی اِس اَدا سے ہوتا ہے
جبین چوم کے اُس نے مجھے روانہ کیا
مال و متاع درد میں سمجھو نہ کم ہمیں
میں شوق وصل میں کیا ریل پر شتاب آیا
میرا لہجہ ہے اگر پروین سا
جیسے ویرانے سے ٹکرا کے پلٹتی ہے صدا
اپنی اس بھول پر بہت خوش ہوں
کیوں بتانے آئے ہیں اس شخص کی مجبوریاں