جامع القرآں، پئے القابِ ذوالنوّرین ہے

جامع القرآں، پئے القابِ ذوالنوّرین ہے

یعنی نور علم حق آداب ذوالنوّرین ہے

 

تیرا اعزاز حقیقی کیا بیاں ہو اے ’’بقیع‘​‘​

ایک اک ذرّہ ترا شادابِ ذوالنوّرین ہے

 

سامنے قرآنِ پاک اور حلق پر تیغِ حیات

قتل گہ بھی منبر و محرابِ ذوالنوّرین ہے

 

دین کی شرم و حیا کا لطف آئے گا اسے

جس کے دل پہ نقش رعب و دابِ ذوالنوّرین ہے

 

آپ نے قرآں مرتب اس طرح فرما دیا

علم کا ہر شہر اب تک بابِ ذوالنوّرین ہے

 

مسکرا کر جان دی یوں راہِ حق میں آپ نے

ُکل جہانِ زندگی بیتابِ ذوالنوّرین ہے

 

جس زمیں پر دفن ہے جسم منوّر اے صبیحؔ

آفتابِ زیست ہے مہتابِ ذوالنوّرین ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ