اردوئے معلیٰ

Search

جاگ اٹھا تو جنوں کس کو بھلا چھوڑے گا

مجھ کو چھوڑے گا نہ کچھ میرے سوا چھوڑے گا

 

تار ہو کر جو تنے جاتے ہیں لمحہ لمحہ

درد اعصاب کو مضراب بنا چھوڑے گا

 

جس کے اک ہاتھ میں اشعار ہیں اک میں وحشت

کیا ترے ہاتھ کو تھامے گا وہ کیا چھوڑے گا

 

بھیڑیا گھات میں ہے سچ کا لپکنے کے لیے

دامنِ خواب اگر دستِ وفا چھوڑے گا

 

ایک وہ بھی ہیں جنہیں نصف مسافت پہ کھلا

عشق لے جا کے سرِ دشتِ قضا چھوڑے گا

 

جس نے تا عمر فقط شعر کے مصرعے جوڑے

اس نے ترکے میں بھی چھوڑی تو نوا چھوڑے گا

 

آ رہوں گا سرِ میدانِ تاسف آخر

تو مرے تارِ تخیل کا سرا چھوڑے گا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ