اردوئے معلیٰ

جب ان کا ذکرِ محبت مری زباں سے چلا

سر شکِ اشک بھی پہنائیِ نہاں سے چلا

 

بندھا تھا تارِ نبوت جو اس پہ ختم ہوا

یہ سلسلہ نہ پھر آگے شہِ شہاں سے چلا

 

خبر کسے تھی کہاں پر ہے اور کیسا ہے

پتہ خدا کا ہمیں شاہِ انس و جاں سے چلا

 

ہے اس کا زخمِ محبت قلوب میں گہرا

سراغ اس کا مجھے آہِ عاشقاں سے چلا

 

اسے تھی ایک ہی منزل حریمِ پاک خدا

وہ دم زدن میں رسا تھا جو خاکداں سے چلا

 

نقوشِ پا سے اجاگر ہے رہگذارِ حیات

دئیے جلا کے چلا وہ جہاں جہاں سے چلا

 

تھا غم زدہ شبِ ہجرت دلِ شہِ خوباں

کہ جب حرم سے اٹھا بزمِ دوستاں سے چلا

 

تھا پھول پھول فسردہ کلی کلی خاموش

وہ دارِ خلد کو جب میرے گلستاں سے چلا

 

دیارِ پاک چلے کارواں پئے دیدار

کوئی کہاں سے چلا ہے کوئی کہاں سے چلا

 

نہ دل ہوا کسی صورت نظرؔ شریکِ سفر

میں واپسی پہ اکیلا اس آستاں سے چلا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات