اردوئے معلیٰ

Search

جب تک بہ ذکرِ خیرِ شہِ مرسلیں رہے

میری زباں پہ چاشنی انگبیں رہے

 

در سایۂ ملائکۂ مُکرَمیں رہے

محفل وہ جس میں تذکرۂ شاہِ دیں رہے

 

میری دعاؤں میں یہ دعا اوّلیں رہے

کلمہ زباں پہ اس کا دمِ واپسیں رہے

 

معراجِ مصطفیٰ کا خیالِ حسیں رہے

کچھ ساعتوں کو دل یہ بہ عرشِ بریں رہے

 

پیشِ نگاہ جس کے بھی عرشِ متیں رہے

وا اس کے واسطے درِ خلدِ بریں رہے

 

یاروں میں چار یار جو بے حد قریں رہے

بعدِ نبی، نبی کے خوشا جانشیں رہے

 

جائے قرارِ شیفتگاں کیوں نہ ہو حرا

اس میں حبیبِ رب کبھی عزلت گزیں رہے

 

تسبیح و ذکرِ ربِ دو عالم ہے بے ثمر

حبِ نبی نہ دل میں اگر تہ نشیں رہے

 

پہنے کفن وہاں تو ملے جنت البقیع

ہو گا نہ دل یہ کس کا کہ مر کر وہیں رہے

 

خوش خلقیِ نبیِ مکرم صد آفریں

چیں بر جبیں ہوئے نہ کبھی خشمگیں رہے

 

بچپن سے لے کے تا نفسِ آخریں نظرؔ

وہ صادق الحدیث رہے وہ امیں رہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ