اردوئے معلیٰ

Search

جب تک مری زبانِ شگفتہ بیاں رہے

نغمہ طرازِ نعتِ شہِ دوجہاں رہے

 

رحمت خدائے پاک کی سایہ کناں رہے

کیا خوب جتنی دیر بھی ان کا بیاں رہے

 

ہر چند ہم بہ زمرۂ آوارگاں رہے

پھر بھی اسیرِ الفتِ شاہِ شہاں رہے

 

یادِ حبیبِ پاک جو جلوہ فشاں رہے

قندیلِ نور قلب مرا بے گماں رہے

 

جب تک نظر فروز گل وگلستاں رہے

جب تک بساطِ عرض رہے آسماں رہے

 

جب تک فلک پہ روشنی کہکشاں رہے

ہر لب پہ داستانِ شہِ انس و جاں رہے

 

کرّو بیاں بہ عرش ہیں اہلِ زمیں بہ فرش

معمور ان کے ذکر سے دونوں جہاں رہے

 

سب انبیاء خدا کے مقرب ہیں ہاں مگر

محبوبِ کبریا وہی رحمت نشاں رہے

 

کوئی عمل مطابقِ سنت اگر نہ ہو

لاریب ایسی سعی عمل رائے گاں رہے

 

دینِ متیں پہ ان کی چلے جو تمام عمر

خرسند و کامیاب رہے کامراں رہے

 

دیکھا ہے جب سے گنبدِ خضرا خوشا نصیب

بزمِ تصورات میں وہ آستاں رہے

 

طیبہ کے قافلے میں ہو شامل پھر ایک بار

آگے رہے نظرؔ کہ پسِ کارواں رہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ