اردوئے معلیٰ

Search

جس کی منزل بھی درِ سیدِ ابرار نہیں

ہو گا انسان مگر وہ مرا دلدار نہیں

 

صرف دنیا میں نہیں حشر کے دن بھی لوگو

دامنِ سرورِ عالم کسے درکار نہیں

 

روح بھی اپنی درودوں سے معطر رکھنا

چند آنسو تو وہاں قرب کا معیار نہیں

 

در بدر قریہ بہ قریہ ہی پھرے گی دانش

مرکزِ فکر اگر کوچہِ سرکار نہیں

 

اُنکے قدمین کا صدقہ ہے یہ ساری رونق

ورنہ دنیا تری قسمت میں تو انوار نہیں

 

نسبتِ سرورِ کونین کا وہ نام نہ لے

لہجے کی تلخی پہ جو شخص بھی مختار نہیں

 

ہر کڑے وقت میں اُنکا ہے تصور مرہم

اُنکی چاہت ہے تو پھر جینا بھی دشوار نہیں

 

تیری نسبت پہ فقط ناز ہے آقائے شکیلؔ

بن تمہارے مرا کوئی بھی طرفدار نہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ