اردوئے معلیٰ

Search

جنابِ شیرِ خدا کے قدموں میں سروری ہے

اور ان کی چاہت مرے مقدر کی روشنی ہے

 

درِ سخا سے علوم سارے ہی بٹ رہے ہیں

ہر اِک فراست یہاں مؤدب کھڑی ہوئی ہے

 

یہ ان کی تلوار پر ازل سے لکھا ہوا ہے

ترے مقابل ہر ایک طاقت کی بے بسی ہے

 

خدائے واحد نے اپنے پردے ہٹا دئیے ہیں

تمہارے سجدے بتا گئے ہیں یہ بندگی ہے

 

جہاں میں کربل سا ظلم ہوتا کبھی نہ دیکھا

ترے گھرانے کا شیوہ لیکن بہادری ہے

 

تمہاری سیرت کے سرورق پر یہی لکھا ہے

کہ حکمِ آقا کے بعد سب کچھ ہی ملتوی ہے

 

جو نامِ مولا علیؓ کو سن کر نہ جھوم اُٹھے

یہ اُس کے اندر کی مفلسی ہے یہ تیرگی ہے

 

وہ جب کہیں گے شکیلؔ مانگو بس اتنا کہنا

کہ میری حسرت ترے گداؤں کی نوکری ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ