اردوئے معلیٰ

Search

جن کی رحمت برستی ہےسنسار پر

اُن کی چشمِ کرم ہو گنہ گار پر

 

گو کہ کافر رہے دُشمنِ جاں مگر

پھر بھی اُنگلی اُٹھائی نہ کردار پر

 

اُن کو بخشی خُدا نے عجب چاشنی

مر مٹے سننے والے بھی گُفتار پر

 

پیش کرنے کو اس کے سوا کچھ نہیں

قلب و جاں ہوں فدا میرے سرکار پر

 

سوئے عرشِ علیٰ تھا وہ کیسا سفر

آج سائنس بھی حیراں ہے رفتار پر

 

خالی دامن تھا پھر بھی چلا ہی گیا

لےکے اشکوں کے تحفے میں دربار پر

 

ہجر کے درد نے سب کو تڑپا دیا

مِثلِ بِسمل تھے محفل میں اشعار پر

 

ہے مرض میں اضافہ مرے دم بدم

اب تو کر دیں کرم اپنے بیمار پر

 

ہیں جلیل اپنے غم کا مداوا وہی

سو جما لی نظر اپنے غمخوار پر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ