اردوئے معلیٰ

Search

جو بھی نکلا تری محفل سے نہ تنہا نکلا

دل میں اپنے لیے ارمانوں کی دنیا نکلا

 

کوئی ایسا، کوئی ویسا، کوئی کیسا نکلا

لاکھ بندوں میں اک اللہ کا بندہ نکلا

 

رخِ ظلمت کدۂ دہر ہوا نورانی

مطلعِ دہر پہ جب سے مہِ بطحا نکلا

 

ہم جسے ذرہ ناچیز سمجھتے تھے وہی

اپنے باطن میں لیے اک نئی دنیا نکلا

 

اشک بہہ جائیں جو آنکھوں سے، ذرا دل ٹھہرے

ہم غریبوں کا یہی ایک سہارا نکلا

 

غمِ دنیا، غمِ عقبیٰ، غمِ فردا پا لے

دل تو اپنے ہی لہو کا یہ پیاسا نکلا

 

دشتِ غربت میں ہمیں ایک نہیں ہیں تنہا

جستجو میں تری ہر ذرہ صحرا نکلا

 

دامِ دنیا میں نظرؔ پھنس ہی گیا دل آخر

لاکھ سمجھاتے رہے کچھ نہ نتیجہ نکلا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ