اردوئے معلیٰ

Search

جو راہِ حق سے طبیعت کبھی بھٹکتی ہے

مثالِ خار کوئی دل میں شے کھٹکتی ہے

 

جہاں بھی دیکھیے انسانیت سسکتی ہے

رُخِ حیات سے حسرت سی اک ٹپکتی ہے

 

جو محوِ خواب تھے دنیا سے ٹھوکریں کھائیں

کھلی جو آنکھ تو دنیا ہمیں تھپکتی ہے

 

جو سوچتا ہوں کہ تعمیرِ آشیاں کر لوں

معاً خیال میں بجلی سی اک چمکتی ہے

 

اٹھا لیا تھا ترے آستاں سے سر اپنا

تو زندگی ہے کہ اب در بدر بھٹکتی ہے

 

چراغِ راہ کا دیتی ہے کام منزل میں

جبیں کہ لمعۂ ایماں سے جب دمکتی ہے

 

تمہارے قرب کی لذت کا حال کیا ہو گا

کہ جب خیال سے دنیائے دل مہکتی ہے

 

تری نگاہ میں دنیائے دوں متاعِ عزیز

مری نظرؔ میں یہی شے مگر کھٹکتی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ