اردوئے معلیٰ

جو رہے یوں ہی غم کے مارے ہم

تو یہی آج کل سدھارے ہم

 

مرتے رہتے تھے اس پہ یوں پر اب

جا لگے گور کے کنارے ہم

 

دن گذرتا ہے دم شماری میں

شب کو رہتے ہیں گنتے تارے ہم

 

ہے مروت سے اپنی وحشت دور

انس رکھتے ہیں تم سے پیارے ہم

 

زندگی بار دوش آج ہے یاں

دیکھیں گے کل جو ہوں گے بارے ہم

 

جا چکی بازی یعنی مرتے ہیں

جیتے تم یہ قمار ہارے ہم

 

میرؔ آؤ گے آپ میں بھی کبھو

سخت مشتاق ہیں تمھارے ہم

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات