اردوئے معلیٰ

Search

جو عرش کا چراغ تھا میں اس قدم کی دھول ہوں

گواہ رہنا زندگی میں عاشقِ رسول ہوں

 

مری شگفتگی پہ پت جھڑوں کا کچھ اثر نہ ہو

کِھلا ہی جو ہے مصطفٰے کے نام پر وہ پھول ہوں

 

مری دعاؤں کا ہے رابطہ درِ حضور سے

اسی لیے خدا کی بارگاہ میں قبول ہوں

 

بڑھا دیا ہے حاضری نے اور شوقِ حاضری

مسرتیں سمیٹ کر بھی کس قدر ملول ہوں

 

مظفؔر آخرت میں بخشوائیں گے وہی مجھے

کہ سر سے پاؤں تک قصور ہوں، خطا ہوں، بھول ہوں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ