جہاں سے نقش ظلمت کا مٹانا کس کو آتا ہے

جہاں سے نقش ظلمت کا مٹانا کس کو آتا ہے

چراغ دین دنیا میں جلا نا کس کو آتا ہے

 

رضائے رب کی خاطر گھر لٹا نا کس کو آتا ہے

قضا کی چھاؤں میں بھی مسکرانا کس کو آتا ہے

 

یزیدی ظلمتوں میں کفر و باطل کے اندھیرے میں

مثال مہر تاباں جگمگانا کس کو آتا ہے

 

زمین کربلا آواز دے گی یہ قیامت تک

خدا کے نام پر قربان جانا کس کو آتا ہے

 

وہ منظر دیکھ کر ماتم کیے ہیں آسمانوں نے

غم شبیرؓ میں آنسو بہانا کس کو آتا ہے

 

زمانہ کب بھلا سکتا ہے سقائے سکینہ کو

وفاداری میں یوں بازو کٹانا کس کو آتا ہے

 

اُسی نانا کے سجدوں کی یہی تعلیم تھی ورنہ

برستی آگ میں سجدے میں جانا کس کو آتا ہے

 

زمین نینوا گلنار ہے، خون شہیداں سے

لہو رگ رگ کا گلؔ ، حق پر بہانا کس کو آتا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ