اردوئے معلیٰ

جیسے کسی کو خواب میں میں ڈھونڈھتا رہا

دلدل میں دھنس گیا تھا مگر بھاگتا رہا

 

بے چین رات کروٹیں لیتی تھیں بار بار

لگتا ہے میرے ساتھ خدا جاگتا رہا

 

اپنی اذاں تو کوئی مؤذن نہ سن سکا

کانوں پہ ہاتھ رکھے ہوئے بولتا رہا

 

ساعت دعا کی آئی تو حسب نصیب میں

خالی ہتھیلیوں کو عبث گھورتا رہا

 

اس کی نظر کے سنگ سے میں آئنہ مثال

ٹوٹا تو ٹوٹ کر بھی اسے دیکھتا رہا

 

انساں کسی بھی دور میں مشرک نہ تھا کبھی

پتھر کے نام پر بھی تجھے پوجتا رہا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات