اردوئے معلیٰ

 

حشر تک شافعِ محشر کا ثناخواں ہونا​

بخشوائے گا مجھے میرا سخنداں ہونا​

 

جلوہ گر ہے مرے خوابوں میں مدینے کی فضا​

لے اڑا مجھ کو خیالوں کا پرافشاں ہونا​

 

رشتہء عشقِ نبی کارِ رفو کرتا ہے ​

راس آیا مرے دامن کو گریباں ہونا​

 

دامنِ ابرِ کرم نے مرے آنسو پونچھے​

تارِ گریہ کو مبارک ہو رگِ جاں ہونا​

 

آپ کے دَم سے دعاؤں کو ملا رنگِ قبول​

آپ کے غم نے سکھایا مجھے خنداں ہونا​

 

آپ کے نقشِ کفِ پا کی تجلی سے لیا​

ماہ و خورشید و کواکب نے درخشاں ہونا​

 

کاش میں بھی اُنہیں گلیوں میں بکھر جاؤں ایاز​

عینِ تسکیں ہے جہاں دل کا پریشاں ہونا​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات