اردوئے معلیٰ

Search

حضورِ عالی کی مدحت کا لطف لیتا ہوں

میں دور ہو کے بھی قربت کا لطف لیتا ہوں

 

مدینہ پاک تصور میں جب سے بیٹھ گیا

میں وقفے وقفے سے جنت کا لطف لیتا ہوں

 

مرے مزاج کی رونق ہے یادِ شہرِ نبی

طبیعتًا میں نفاست کا لطف لیتا ہوں

 

غلامِ شاہ سمجھ کر کوئی حقیر کہے

قسم خدا کی حقارت کا لطف لیتا ہوں

 

وہاں پہ دیکھتا رہتا ہوں صرف روضے کو

میں ایسے وقتِ غنیمت کا لطف لیتا ہوں

 

غلامئِ شہِ کونین کے وسیلے سے

میں راستوں کی اطاعت کا لطف لیتا ہوں

 

مچل سا جاتا ہے ذکرِ دیارِ اطہر سے

میں دل کی بس اسی عادت کا لطف لیتا ہوں

 

تبسم اپنے نبی کی ثناء کے صدقے سے

جہاں بھی جاتا ہوں عزت کا لطف لیتا ہوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ