اردوئے معلیٰ

Search

خارج از امکاں ہے تکمیلِ بیانِ مصطفیٰ

بس ہوں تا مقدور میں بھی نغمہ خوانِ مصطفیٰ

 

کیا بشر سمجھے گا ذاتِ بے کرانِ مصطفیٰ

خالقِ کونین بھی ہے قدر دانِ مصطفیٰ

 

آئے دنیا سے سمٹ کر عاشقانِ مصطفیٰ

دیدنی ہے ازدحامِ آستانِ مصطفیٰ

 

شانِ آقائی تو دیکھیں سرورِ کونین کی

رہتی دنیا کے ہیں آقا، خادمانِ مصطفیٰ

 

بے مثیل و منفرد اپنی صفات و ذات میں

دونوں عالم میں نہیں کوئی بسانِ مصطفیٰ

 

دل پذیر و دل نشیں کیونکر نہ ہو ان کا کلام

وحیِ رب ہے ماخذِ حرفِ زبانِ مصطفیٰ

 

ہم خدا کو مانتے پہچانتے ہیں اس طرح

جس طرح ہم نے سنا ہے از زبانِ مصطفیٰ

 

حشر تک باقی رہیں گے اس کے قرآن و حدیث

حشر تک چلتی رہے گی داستانِ مصطفیٰ

 

ذاتِ اقدس ترجماں ہے اس کتاب اللہ کی

اور قرآنِ مکرم ترجمانِ مصطفیٰ

 

مصحفِ قرآں بھی ہے آئینۂ سنت بھی ہے

ہیں پئے ہر امتی دو ارمغانِ مصطفیٰ

 

سایۂ قرآں میں ان کے جو گزاریں زندگی

حشر میں مل جائے گی ان کو امانِ مصطفیٰ

 

سارے نبیوں کی امامت کا ہے منصب آپ کا

یہ ہے رفعت، یہ ہے عظمت، یہ ہے شانِ مصطفیٰ

 

عمر بھر دیکھا کریں گے آئینہ میں اپنے لب

چومنے کو مل گیا گر آستانِ مصطفیٰ

 

میہماں جیسا ہو ویسی چاہیے تکریم بھی

ہے شبِ اسرا میں خالق میزبانِ مصطفیٰ

 

قدر و عزت کی نظرؔ سے دیکھتے ہیں اس کو ہم

جو بھی ہے چشم و چراغِ دودمانِ مصطفیٰ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ