اردوئے معلیٰ

خلش کی بڑھ کے دردِ بیکراں تک بات پہنچی ہے

محبت کی ذرا دیکھیں کہاں تک بات پہنچی ہے

 

نکل کر آہِ دل میری سرِ عرشِ بریں پہنچی

درونِ دل سے چل کر آسماں تک بات پہنچی ہے

 

جو منزل تک پہنچ کر اُف پلٹ آیا ہے منزل سے

اسی گم کردہ منزل کارواں تک بات پہنچی ہے

 

نگاہیں بار بار اٹھتی ہیں سوئے آسماں میری

حدیثِ گلستاں میں آشیاں تک بات پہنچی ہے

 

چھِڑا محفل میں جب بھی ذکرِ جامِ زہرِ غم دیکھا

اسی شیریں سخن شیریں زباں تک بات پہنچی ہے

 

حقیقت ہے نظرؔ دیوار و در کے کان ہوتے ہیں

کہی جو زیرِ لب اہلِ جہاں تک بات پہنچی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات