اردوئے معلیٰ

Search

خوابوں کو حقیقت کی تعبیر دکھا دینا

افکارِ عقیدت کی رفتار بڑھا دینا

 

عقبیٰ ہی کی بس مجھ کو اک فکرِ رسا دینا

دنیا کی محبت کو اس دل سے مٹا دینا

 

ایمان کے جذبوں کا طوفان سا اٹھتا ہے

میں کیسے رقم کر لوں انداز سکھا دینا

 

پہلے تو مدینے میں کر لینا طلب مجھ کو

پھر گنبدِ خضریٰ کے والی کی ردا دینا

 

شاداب میں دیکھوں گا اپنا میں چمن اک دن

گلزارِ مدینہ کی بس اس کو ہوا دینا

 

کیوں ڈھونڈوں میں دنیا کے ناکام طبیبوں کو

تم میرے مسیحا ہو تم مجھ کو دوا دینا

 

دربار میں بلوا کے اس چاک گریباں کو

سرکار فداؔ کی بھی توقیر بڑھا دینا

 

چوکھٹ پہ بلا لینا یہ اس کی تمنا ہے

مضطر ہے فداؔ اس کو افکارِ رسا دینا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ