اردوئے معلیٰ

Search

خواب میں زلف کو مکھڑے سے ہٹا لے آجا

بے نقاب آج تو اے گیسووں والے آجا

 

بیکسی پر مری خوں روتے ہیں چھالے آجا

راہ میں چھوڑ گئے قافلے والے آجا

 

دم تری دید کو آنکھوں میں لگا رکھا ہے

لے رہے ہیں ترے بیمار سنبھالے آجا

 

ہوں سیہ کار مرے عیب کھلے جاتے ہیں

کملی والے مجھے بھی کملی میں چھپا لے آجا

 

صورت لالہ ہے پُرداغ کا بیاں کا سینہ

پڑ رہے ہیں ترے بیمار کے لالے آجا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ