اردوئے معلیٰ

خواجہِ خواجگاں رہبرِ رہبراں

والیِ باولی قبلہِ عارفاں

آستانِ کرم کی مچی دھوم ہے

 

تیرا جود و سخا ہم کو معلوم ہے

کردو مہرو عطا جوبھی محروم ہے

 

سب پہ چشمِ کرم محسنِ ناقصاں

خواجہِ خواجگاں رہبرِ رہبراں

والیِ باولی قبلہِ عارفاں

تیرا دربار ہے عظمتوں کا نشاں

 

بحرِ روحانیت معرفت کا جہاں

ذکر و الہام کا ساحلِ بے کراں

 

ایک چھینٹااِدھر بھی اے ابرِ رواں

خواجہِ خواجگاں رہبرِ رہبراں

والیِ باولی قبلہِ عارفاں

تم ہو خود آشنا تم ہو حق آشنا

 

فیضِ صدیقیت کی انوکھی ضیا

چشمہِ عشق ہو نازشِ اولیا

 

تیرے خدام بھی حسن کی کہکشاں

خواجہِ خواجگاں رہبرِ رہبراں

والیِ باولی قبلہِ عارفاں

میرے پردہ نشیں مجھ کو جلوہ دکھا

 

روح کو چادرِ نور بھی ہو عطا

کوچہِ جاں مہکتا رہے دلربا

 

زندگی کی تپش میں ہو تم سائباں

خواجہِ خواجگاں رہبرِ رہبراں

والیِ باولی قبلہِ عارفاں

دل کے ویراں نگر پھر سے پُرنور ہوں

 

کاسے سب کے مرادوں سے بھرپور ہوں

جو پریشان آئے ہیں مسرور ہوں

 

تم بڑے ہی سخی تم بڑے مہرباں

خواجہِ خواجگاں رہبرِ رہبراں

والیِ باولی قبلہِ عارفاں

میری پہچان مرشد نگر سے ہوئی

 

یہ پذیرائی سب تیرے دَر سے ہوئی

جو عنایت ہوئی تیرے گھر سے ہوئی

 

ہے شکیلؔ اب یہی نام وردِ زباں

خواجہِ خواجگاں رہبرِ رہبراں

والیِ باولی قبلہِ عارفاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔