اردوئے معلیٰ

Search

خوشبو طراز رنگوں کی جھالر ہے سامنے

اِک رشکِ خُلد شہر کا منظر ہے سامنے

 

وہ تھام لیں تو اُن کو ہیں زیبا عنایتیں

ورنہ تو کارِ خستہ کا دفتر ہے سامنے

 

اُن کی عطائے خاص کے ہیں ضابطے الگ

اِک بار مانگ لیں تو مکرّر ہے سامنے

 

آنکھیں جھُکی ہُوئی ہیں مکینانِ خُلد کی

عظمت مآب آپ کی دُختر ہے سامنے

 

معروف ہے جہان میں اپنا نشانِ ناز

ماتھے پہ نقشِ نعل کا جھُومر ہے سامنے

 

اے عہدِ پاسبانیٔ شمر و یزید سُن

موجِ خیالِ سبطِ پیمبر ہے سامنے

 

رکھتا ہُوں ساتھ ساتھ سحَر بار سلسلے

شامِ لقا کا خوابِ منوّر ہے سامنے

 

لکھنے لگا ہوں چاند ستاروں سے نعتِ نَو

جبریل کا رکھا ہُوا شہپَر ہے سامنے

 

یوں ہی نہیں تھمی ہے یہ صوتِ عطش کی گُونج

دستِ عطائے ساقیٔ کوثر ہے سامنے

 

نکہت نواز سبز سویرے ہیں روبرو

پیہم خیالِ گنبدِ اخضر ہے سامنے

 

مقصودؔؔ مجھ کو گرمیٔ محشر سے کیا خطر

جب سائبانِ شافعِ محشر ہے سامنے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ