اردوئے معلیٰ

خوشبو ہے دو عالم میں تری اے گلِ چیدہ

کس منہ سے بیاں ہو ترے اوصافِ حمیدہ

 

تجھ سا کوئی آیا ہے نہ آئے گا جہاں میں

دیتا ہے گواہی یہی عالم کا جریدہ

 

اے ہادیٔ برحق! تری ہر بات ہے سچی

دیدہ سے بھی بڑھ کر ہے تیرے لب کا شنیدہ

 

اے رحمتِ عالم! تری یادوں کی بدولت

کس درجہ سکوں میں ہے مرا قلب تپیدہ

 

تو روحِ زمن روحِ چمن روحِ بہاراں

تو جانِ بیاں جانِ غزل جانِ قصیدہ

 

ہے طالبِ الطاف مرا حالِ پریشاں

محتاجِ توجہ ہے مرا رنگِ پریدہ

 

خیرات مجھے اپنی محبت کی عطا کر

آیا ہوں ترے در پہ بہ دامانِ دریدہ

 

یوں دور ہوں تائبؔ میں حریمِ نبوی سے

صحرا میں ہو جس طرح کوئی شاخِ بریدہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات