اردوئے معلیٰ

Search

خیالوں میں اُن کا گزر ہو گیا ہے

مری مدحتوں میں اثر ہو گیا ہے

 

درودِ نبی سے کیا دل کو روشن

مرا دل بھی مثلِ قمر ہو گیا ہے

 

یہی خلد کا راستہ ہے یقیناً

مدینے کی جانب سفر ہو گیا ہے

 

سعادت ملی ہے یہ مجھ کو خدا سے

سدا نعت لکھنا ہنر ہو گیا ہے

 

کڑی دھوپ میں جب پکارا ہے اُن کو

مرا سوچنا بھی شجر ہو گیا ہے

 

یہ عشقِ نبی جب سے اترا ہے دل میں

مرے دل کا روشن نگر ہو گیا ہے

 

یہ حبدار قائم نبی کا ہے خادم

جبھی تو یہ مثلِ سحر ہو گیا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ