اردوئے معلیٰ

Search

درود اپنے نبی کو پیش کرنا میری عادت ہے

یہی میری محبت ہے یہی میری عبادت ہے

 

انہی کی یاد کی محفل بھی صحنِ دل میں ہے برپا

کرم ہے شاہِ طیبہ کا ملی رحمت ہی رحمت ہے

 

قلم مشغول رہتا ہے مرا آقا کی مدحت میں

بڑی خوش بخت ہوں مجھ کو ملی ایسی سعادت ہے

 

برستی نور کی بارش ہے دربارِ رسالت میں

جہاں آقا کا مسکن ہے وہ نگری رشکِ جنت ہے

 

شفاعت کے لیے تشریف لائیں گے شہِ والا

گنہ گاروں کی بخشش حشر میں اُن کی بدولت ہے

 

کھلے قسمت مجھے بھی آپ کا دیدار ہو جائے

دعا منظور ہو جائے یہی بس میری چاہت ہے

 

اے شاہِ دو جہاں اب ناز کو در پر بلا لیجیے

مدینے میں رہوں اب تا ابد یہ میری حسرت ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ