اردوئے معلیٰ

Search

دشتِ امکان سے گزر جائیں

آؤ ہم راستے میں مر جائیں

 

اٹھ تو آئے ہیں تیرے پہلو سے

اب نہیں سوجھتا کدھر جائیں

 

تم اسی وقت کوچ کر جانا

ہم اگر راہ میں بکھر جائیں

 

ہم بھلا شعر کیا سنائیں گے

لوگ جب سوچنے سے ڈر جائیں

 

یا تو پرواز جا سکے تجھ تک

یا ہواؤں پہ اپنے پر جائیں

 

تو مسیحا ہے تو چلو ہوگا

دل ہی گر زندگی سے بھر جائیں؟

 

کھیل تکمیل تک پہنچتا ہے

جائیں اب آپ اپنے گھر جائیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ