اردوئے معلیٰ

دل میں اترتے حرف سے مجھ کو ملا پتا ترا

معجزہ حسنِ صوت کا ، زمزمہِ صدا ترا

 

میرا کمال فن ، ترے حسن کلام کا غلام

بات تھی جانفزا تری ، لہجہ تھا دلربا ترا

 

جاں تری سر بہ سر جمال ! دل ترا ، آئینہ مثال

تجھ کو ترے عدُو نے بھی دیکھا تو ہو گیا ترا

 

اے مرے شاہِ شرق و غرب ! نانِ جویں غزا تری

اے مرے بوریا نشیں ! سارا جہاں گدا ترا

 

سنگ زنوں میں گِھر کے بھی ، تو نے انہیں دعا ہی دی

دشت بلا سے بارہا ، گزرا ہے قافلہ ترا

 

میرا تو کائنات میں ، تیرے سوا کوئی نہیں

ارض تری ، سما ترے ، بندے ترے ، خدا ترا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات