اردوئے معلیٰ

دل میں عشقِِ شہِ کونین کی ہے آگ دبی​

دل میں عشقِ شہ کونین کی ہے آگ دبی​

عجمی شیشے میں ہے بادہ نابِ عربی​

مجھ سا محرومِ ازل اور یہ فیضانِ نبی​

مرحبا سیدِ مکی مدنی العربی​

دل و جاں باد فدایت چہ عجب خوش لقبی​

 

شہِ خوبانِ عرب نازشِ خوبانِ عجم​

ترے جلووں سے ضیا گیر ہیں انوارِ حرم​

راحتِ جانِ حزیں ہے ، ترا اسمِ اعظم​

منِ بیدل بجمالِ تو عجب حیرانم​

اللہ اللہ چہ جمال است بدیں بو العجبی​

 

کیف پرور ہے ترے باغِ مدینہ کی بہار​

عطر سے بڑھ کے معطر ہے پسینہ تیرا​

خاکِ در تیری ہے دنیا کے لئے خاکِ شفا​

نسبتے نیست بذاتِ تو بنی آدم را​

بہتر از عالم و آدم تو چہ عالی نسبی​

 

یہی مکہ تھا ترے فیضِ کرم کو منظور​

یہی وادی ترے جلووں سے ہوئی تھی معمور​

چُن لیا صبحِ ازل تیری تجلی نے یہ طور​

ذاتِ پاکِ تو دریں ملکِ عرب کردہ ظہور​

زاں سبب آمدہ قرآں بہ زبانِ عربی​

 

اے شہنشاہِ امم ! سید و سالارِ امم​

ترے کوچے کی زمیں رُوکشِ گلزارِ ارم​

ترا ذرہ بھی ہے صحرا ترا قطرہ بھی ہے یم​

نسبتِ خود بہ سگت کردم و بس منفعلم​

زانکہ نسبت بہ سگِ کوئے تو شد بے ادبی​

 

خواجہ ہر دوسرا سوئے من انداز نظر​

شانِ رحمت بنما سوئے من انداز نظر​

سیدی ! بہرِ خدا سوئے من انداز نظر​

چشمِ رحمت بکشا سوئے من انداز نظر​

اے قریشی لقبی ، ہاشمی و مطلبی​

 

بوذر و خالد و صدیق و عمر تیرے غلام​

عرش سے تجھ کو پہنچتا ہے درود اور سلام​

شہِ کونین ! ترا ہر دلِ زندہ میں مقام​

نخلِ شادابِ مدینہ ز تو سر سبر مدام​

تاشدہ شہرہ آفاق بہ شیریں رطبی​

 

اے رسولِ عربی ! گوہر نایاب حیات​

تجھ سے پائی ہے زمانے نے تب و تابِ حیات​

حق نے رکھے ہیں ترے ہاتھ میں اسبابِ حیات​

ما ہمہ تشنہ لبانیم و توی آبِ حیات​

لطف فرما کہ ز حد می گذر و تشنہ لبی​

 

ہم نے چکھی تھی ترے عشق کی مے یومِ الست​

ہم اسی بادہ سرشار کی لذت سے ہیں مست​

یہی ایمان ہے ، دنیا کہے اوہام پرست​

شبِ معراج عروجِ تو ز افلاک گذشت​

بہ مقامیکہ رسیدی نہ رسد ہیچ نبی​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ