اردوئے معلیٰ

Search

دل میں کسی کو اور بسایا نہ جائے گا

ذکرِ رسولِ پاک بُھلایا نہ جائے گا

 

وہ خود ہی جان لیں گے ، جتایا نہ جائے گا

ہم سے تو اپنا حال سُنایا نہ جائے گا

 

ہم کو جزا مِلے گی محمد کے عشق کی

دوزخ کے آس پاس بھی لایا نہ جائے گا

 

روشن رہے گا داغِ فراقِ شہِ اُمَم

یہ وہ چراغ ہے جو بُجھایا نہ جائے گا

 

بیشک حضور شافعِ محشر ہیں ، مُنکرو

کیا اُن کے سامنے تمہیں لایا نہ جائے گا؟

 

کہتے تھے یہ بلال تَشدُّد پہ کفر کے

عشقِ نبی تو دل سے مٹایا نہ جائے گا

 

مانے گا اُن کی بات خدا ، حشر میں نصیرؔ

بِن مصطفےٰ ، خدا کو منایا نہ جائے گا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ