دل کو میرے کر دے اب سیراب رب العلمیں

دل کو میرے کر دے اب سیراب رب العلمیں

میں تو مشتِ آب و گل ہوں اور تو نور آفریں

 

خالق ارض و سما اے مالک فرشِ زمیں

تیری قدرت پہ فدا دل ، اور خم میری جبیں

 

بندگی کا تو مری حاصل ہے اے معبود کل

زینتِ عرشِ بریں اے رونقِ فرشِ زمیں

 

ملتجی ہوں میں ترے لطف و کرم کا اے کریم

لطف فرما مجھ پہ اے الطاف و رحمت کے امیں

 

ہے نظر میں نور تیرا ، رنگ تیرا اے خدا

اور یہ سچائی ہے تو ہے مرے دل کے قریں

 

آرزوئے دل بھی تو اے مالکِ کل کائنات

آنکھ میں پردہ نشیں تو بر فلک جلوہ نشیں

 

میں کیا جاؤں طلب ارضِ حرم پراے فداؔ

بہرِ سجدہ ہر نفس بیتاب ہے میری جبیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ایسا بھی کوئی خواب خدایا دکھائی دے​
ہر لمحہ ہے رحمت کی برسات مدینے میں
اے خالقِ کل سامنے اک بندہ ترا ہے
میرے اللہ ! گناہوں کے مرض سے ہو شِفا
نیچی نظریں کئے دربار میں ہم آتے ہیں
لب کو ذکرِ حضور ملٍتا ہے
امن عالم کے لیے انسانِ اکمل بھیج دے
پروردگار! صاحبِ ایمان کیا کریں
فصلِ بہار آئی
یوں نہ بنایا قادرِ مطلق خالق نے ان کا سایہ