اردوئے معلیٰ

دل کو میرے کر دے اب سیراب رب العلمیں

میں تو مشتِ آب و گل ہوں اور تو نور آفریں

 

خالق ارض و سما اے مالک فرشِ زمیں

تیری قدرت پہ فدا دل ، اور خم میری جبیں

 

بندگی کا تو مری حاصل ہے اے معبود کل

زینتِ عرشِ بریں اے رونقِ فرشِ زمیں

 

ملتجی ہوں میں ترے لطف و کرم کا اے کریم

لطف فرما مجھ پہ اے الطاف و رحمت کے امیں

 

ہے نظر میں نور تیرا ، رنگ تیرا اے خدا

اور یہ سچائی ہے تو ہے مرے دل کے قریں

 

آرزوئے دل بھی تو اے مالکِ کل کائنات

آنکھ میں پردہ نشیں تو بر فلک جلوہ نشیں

 

میں کیا جاؤں طلب ارضِ حرم پراے فداؔ

بہرِ سجدہ ہر نفس بیتاب ہے میری جبیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات