اردوئے معلیٰ

Search

دہر کو سیرت سرکار سکھا دی جائے

سنگ باری جو کرے کوئی دُعا دی جائے

 

آنے لگتا ہے وہیں جوش پہ دریائے کرم

آپ کو جب بھی مصیبت میں صدا دی جائے

 

ہیں جو محروم ثنا خوانی شاہِ بطحا

اے خدا! ان کو بھی توفیقِ ثنا دی جائے

 

آپ کے حکم سے بڑھ کے کوئی منشور نہیں

یہ حقیقت بھی زمانے کو بتا دی جائے

 

شاہِ کونین کی رحمت کا تصوّر کر کے

قلبِ مایوس کو جینے کی ادا دی جائے

 

ہیں جو مطلوب مساواتِ نبی کے چرچے

تو یہ تفریق من و تو کی مٹا دی جائے

 

دل یہ کہتا ہے مری سمت وہ آئیں گے ضرور

کہکشاں آج عقیدت کی بچھا دی جائے

 

روشنی سیرتِ سلطانِ حرم سے لے کر

قلب کو حلم، نگاہوں کو حیا دی جائے

 

یہ بھی فیضانِ رضا سرورِ دیں کا دیکھا

بھیک سائل کو طلب سے بھی سِوا دی جائے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ