اردوئے معلیٰ

Search

دیدۂ شوق میں جب حاصلِ منظر ابھرے

مطلعِ حرف سے تب مدحِ پیمبر ابھرے

 

اسمِ تاباں شہِ کونین کا جب بھی سوچا

بامِ افکار پہ کیا کیا مہ و اختر ابھرے

 

ان کی طاعت میں کوئی بردہ مٹادے خود کو

اس پہ بھی بھیک میں کچھ حسنِ پیمبر ابھرے

 

ان کے عشّاق کو کس طرح مٹائے دنیا

ان کی الفت میں جو ڈوبے ہیں وہ بڑھ کر ابھرے

 

مٹ گیا نام زمانے سے ترے اعدا کا

جو بھی عاشق ہیں وہ عزّت کے فلک پر ابھرے

 

تیری نسبت سے ہی صدیق و عمر چمکے ہیں

تیری نسبت سے ہی عثماں ہوئے، حیدر ابھرے

 

تیرے ہی نقشِ قدم سے ہوا یثرب طیبہ

میرے دل پر بھی شہا نقشِ منوّر ابھرے

 

منتظر جس کی تمنّا میں رہا ہوں نوری

کاش جاتے ہوئے آنکھوں میں وہ منظر ابھرے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ