اردوئے معلیٰ

Search

ذرّہ ، ذرّہ جہاں کا بنا طور ہے

جس طرف دیکھئے نور ہی نور ہے

 

کس کی آمد کے چرچے ہیں کیوں آج یہ

سارا عالم مسرت سے معمور ہے

 

کس لیے ہے فلک سر جھکائے ہوئے

کیوں زمیں اپنی قسمت پہ مغرور ہے

 

جشن برپا ، صدائیں ہیں صلِّ علیٰ

کیوں مَلَک شادماں ، دنیا مسرور ہے

 

ہر طرف راحتیں کیوں نئی رونقیں

ایسا کیا ہے کہ رنج و بلا دور ہے

 

کس لیے خلق حیرت زدہ چار سو

کیوں یہ چشمِ فلک آج مخمور ہے

 

آئی ، آئی ندا دیکھو ، دیکھو ذرا

آج سرکار کا جشنِ پُرنور ہے

 

اُن کے آنے سے خوشیاں دوبالا ہوئیں

اس لیے کوئی غمگیں نہ مجبور ہے

 

عاشقانِ نبی شادماں ہیں رضاؔ

ایک شیطان ہے جو کہ رنجور ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ