اردوئے معلیٰ

Search

راہِ طلب میں لاکھ حوادث ملے مگر

دل بے نیازِ درد تجھے ڈھونڈتا رہا

 

تُو تو دلوں میں ایک خلاء چھوڑ کر گیا

تیرا خلاء نورد تجھے ڈھونڈتا رہا

 

صحرا کی خاک پھانکتے گزری ہے زندگی

میں ہو کے بادگرد تجھے ڈھونڈتا رہا

 

ائے موجہِ نسیمِ بہاراں ، کہاں ہے تُو

دل کا یہ برگِ زرد تجھے ڈھونڈتا رہا

 

اک بے پناہ عشق تھکا تیری کھوج میں

اک بے حساب درد تجھے ڈھونڈتا رہا

 

تحریر کے سوا اسے ترتیب چاہیئے

دیوانِ فرد فرد تجھے ڈھونڈتا رہا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ