اردوئے معلیٰ

Search

رسولِ اُمّی جسے آشنائے راز کرے

جہانِ علم و خرد کیوں نہ اس پہ ناز کرے

 

اگر نگاہِ کرم اک شہِ حجاز کرے

پلک جھپکنے میں عاصی کو پاکباز کرے

 

سوائے نعتِ شہِ عرش کیا ہے صنفِ ادب ؟

نشیبِ لفظ و معانی کو جو فراز کرے

 

مُرادِ حرفِ ’’ کَفَینَاک ‘‘ سے ہے ربط ہمیں

مجال کیا ہے عدو کی جو ساز باز کرے

 

مہک رہا ہو نہ کیوں خارِ فن برنگ گلاب

ثنائے جانِ گلستاں جو سرفراز کرے

 

جسے نصیب ہو مُختارِ مَحو و ثَبت سے ربط

’’وہ اپنی خوبیِٔ قسمت پہ کیوں نہ ناز کرے‘‘

 

ہے جس کا نقشِ قدم پَتّھروں پہ ، اس کے طفیل

دلِ حجر کو بھی میرا سخن گداز کرے

 

اُسے سکندر و قیصر خراج دیتے ہیں

گدائے درگہِ احمد جسے مُجاز کرے

 

کرم جو گیسوئے سرور کرے تو کیوں دنیا

اسیرِ دامِ معاصی و حرص و آز کرے ؟

 

ہے فرض ناقدِ دوراں کا ، بر تمام اصناف

ثنائے اَفصحِ عالَم کا امتیاز کرے

 

ہے عفو خو شہِ والا کی رحمتِ بے حد

ذرا سی ہمتِ مردانہ حیلہ ساز کرے

 

فرازِ عرش صبا کو کہے ، پسِ مردن

کہ میرے لاشے کو خاکِ رہِ حجاز کرے

 

شبِ طویل بلاؤں کی مختصر ہو ابھی

اگر ظہور کوئی گیسوئے دراز کرے

 

ہے صدقہ صاحبِ معراج کا ہر اک رفتار

نظامِ بَرق ہو ، پرواز یا جہاز کرے

 

وہ دو جہاں میں نہ کیوںکر سدا مُعَظم ہو

درِ حضور پہ خم جو سرِ نیاز کرے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ