اردوئے معلیٰ

Search

رواں ہے طبعِ سخن میں جو رنگ و بُوئے ما

بہ مدحِ صاحبِ قرآں ہے چارہ جُوئے ما

 

کبھی سفر ، کبھی گردِ سفر ، کبھی منزل

مدینے والے ! یہی کچھ ہے آرزوئے ما

 

قبول ، تختِ شہی ہے نہ قصرِ دارائی

نیازِ گوشۂ مدحت ہے آپ کی مدحت

 

شرَف نوازِ تمنا ہے آپ کی مدحت

کریم ! آپ کی نسبت ہے آبروئے ما

 

محیطِ دیدہ و دل ہے اُسی کے جذب کی رَو

وہ ایک اسم ہے ، واللہ ، چار سُوئے ما

 

ہیں نور بارِ تخیل اُسی کے نقش و نگار

جو ایک شہرِ تصور ہے روبروئے ما

 

سپردِ شوقِ نویدِ سفر رہے ، ورنہ

عبث ہے اس کے سوا خواہشِ نموئے ما

 

وہ جس کے دَم سے بہارِ حیات ہے مقصودؔ

وہ بادِ خیر چلی آئے اب تو سُوئے ما

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ