روشنی ہی روشنی ہے آمدِ سرکار ہے

روشنی ہی روشنی ہے آمدِ سرکار ہے

چار سو چھائی خوشی ہے آمدِ سرکار ہے

 

گنگناتی ہیں ہوائیں ، محوِ رقصاں ہے فضا

آب و گل میں تازگی ہے آمدِ سرکار ہے

 

آسمانوں کے ملائک بھی زمیں پر جلوہ گر

جستجو میں زندگی ہے آمدِ سرکار ہے

 

آمنہ بی ، بی کے گھر میں جشن ہے میلاد کا

نور کی محفل سجی ہے آمدِ سرکار ہے

 

کہہ رہے ہیں انبیاء و مرسلیں سب مرحبا!

بندگی ہی بندگی ہے آمدِ سرکار ہے

 

برلبِ کون و مکاں ہے الصلٰوۃ والسلام

ساری خلقت جھومتی ہے آمدِ سرکار ہے

 

ظلمتوں کی بدلیاں سب آسماں سے چھٹ گئیں

ہر طرف اب روشنی ہے آمدِ سرکار ہے

 

غم کے مارو ، بے سہارو آؤمکے کو چلیں

آشتی ہی آشتی ہے آمدِ سرکار ہے

 

اے رضاؔ سارے نظاروں میں عجب ہے دلکشی

رُت نئی ، کیا بے خودی ہے آمدِ سرکار ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

طبیعت فطرتاََ پائی سخن کے واسطے موزوں
ہے یہ میدانِ ثنا گر نہ پڑے منہ کے بل
کیفِ یادِ حبیب زیادہ ہے
(سلام) نورِ چشمِ آمنہ اے ماہِ طلعت السلام
پھر کے گلی گلی تباہ ٹھوکریں سب کی کھائے کیوں
اٹھا دو پردہ دکھا دو چہرہ کہ نورِ باری حجاب میں ہے
سخن کو رتبہ ملا ہے مری زباں کیلئے
سرِ میدانِ محشر جب مری فردِ عمل نکلی
راگ ہے ’’باگیشری‘‘ کا اور بیاں شانِ رسول
خواب میں کاش کبھی ایسی بھی ساعت پاؤں

اشتہارات