اردوئے معلیٰ

روشنی ہی روشنی ہے آمدِ سرکار ہے

چار سو چھائی خوشی ہے آمدِ سرکار ہے

 

گنگناتی ہیں ہوائیں ، محوِ رقصاں ہے فضا

آب و گل میں تازگی ہے آمدِ سرکار ہے

 

آسمانوں کے ملائک بھی زمیں پر جلوہ گر

جستجو میں زندگی ہے آمدِ سرکار ہے

 

آمنہ بی ، بی کے گھر میں جشن ہے میلاد کا

نور کی محفل سجی ہے آمدِ سرکار ہے

 

کہہ رہے ہیں انبیاء و مرسلیں سب مرحبا!

بندگی ہی بندگی ہے آمدِ سرکار ہے

 

برلبِ کون و مکاں ہے الصلٰوۃ والسلام

ساری خلقت جھومتی ہے آمدِ سرکار ہے

 

ظلمتوں کی بدلیاں سب آسماں سے چھٹ گئیں

ہر طرف اب روشنی ہے آمدِ سرکار ہے

 

غم کے مارو ، بے سہارو آؤ مکے کو چلیں

آشتی ہی آشتی ہے آمدِ سرکار ہے

 

اے رضاؔ سارے نظاروں میں عجب ہے دلکشی

رُت نئی ، کیا بے خودی ہے آمدِ سرکار ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات